Map News

سمندری گھاس کے کیپسول سے شکستہ دل کی مرمت ممکن

ہیوسٹن، امریکہ(میپ نیوز) دل کے شدید دورے یا ہارٹ اٹیک کے بعد اکثر اوقات دل کے پٹھے،عضلات یا پھر خلیات مردہ ہوجاتے ہیں۔ اس کا انحصار ہارٹ اٹیک کی شدت پر ہوتا ہے لیکن اب امید پیدا ہوئی ہے کہ اگر ایک قسم کی سمندری گھاس ( سی ویڈ) اور خلیاتِ ساق (اسٹیم سیل) پرمشتمل کیپسول سےٹوٹے دل کی مرمت کی جاسکتی ہے۔یہ کیپسول جسامت میں چاول کے دانے کے برابر ہےاور اسے دل کے مریض میں سینے میں سوراخ کرکے دل کے متاثرہ مقام پر رکھا جاسکتا ہے۔ توقع ہے انسانوں کے لیے اگر 30 ہزار اسٹیم سیل پر مشتمل کیپسول استعمال کیا جائے تو دل کے خراب مقام کو بحال کیا جاسکتا ہے۔خلیاتِ ساق ایسے خلیات ہوتے ہیں جو آگے چل کر جسم کے کسی بھی حصے کے خلیات (سیل) میں بدل جاتے ہیں۔ عموماً یہ ہڈیوں کے گودے میں بنتے ہیں۔ خلیاتِ ساق چند دنوں یا ہفتوں میں دل کے خلیات کا روپ دھار کر متاثرہ مقام کو بحال کرسکتے ہیں۔اگر دل کو خون کی فراہمی شدید متاثر ہوجائے تو دل کا دورہ پڑجاتا ہے جس سے دل کے بعض عضلات ہمیشہ کے لیے متاثر ہوجاتے ہیں ۔ یہی وجہ ہے بعض مریض دوسرا یا تیسرا ہارٹ اٹیک نہیں جھیل سکتے اور مرجاتے ہیں۔ پاکستان سمیت دنیا بھر میں لوگ بڑی تعداد میں اس کا شکار ہوکر لقمہ اجل بنتے ہیں اور صرف برطانیہ میں ہی ایک لاکھ افراد اسے جھیلتے ہوئے فوت ہوجاتے ہیں۔اس سے قبل خلیاتِ ساق کو دل پر ڈالنے کی کوشش کی گئی لیکن کوئی فائدہ نہیں ہوسکا کیونکہ جسم کا اندرونی دفاعی نظام اسے بیرونی حملہ آور سمجھتے ہوئے مسترد کردیتا ہے۔ لیکن سمندری گھاس کے کیپسول خلیات کو دل پر برقرار رکھتے ہوئے جسم کی مزاحمت کو روک سکتے ہیں۔

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


دلچسپ و عجیب

سائنس اور ٹیکنالوجی

اہم خبریں

تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ محفوظ ہیں۔
Copyright © 2024 Map News. All Rights Reserved